عوامی مزاحمت نے تحریک انصاف کا عوام دشمن بجٹ مسترد کردیا

0
180

(رپورٹ(انقلابی سوشلسٹ
عوامی مزاحمت کے زیراہتمام 12جون بروز بدھ پنجاب اسمبلی کے سامنے عوام دشمن بجٹ کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔عوامی مزاحمت لاہور میں بائیں بازوکے گروپس اور ٹریڈ یونینوں کا اتحاد ہے۔اس کا مقصد آئی ایم ایف کی ڈیل اور تحریک انصاف کی عوام دشمن پالیسیوں کے خلاف عوامی تحریک کو تعمیر کرنا ہے۔اس مظاہرے میں شرکاء نے پلے کارڈ اور بینرز اُٹھا رکھے تھے جس میں ”آئی ایم ایف کی پالیسیاں نامنظور“ ”نیولبرل بجٹ نامنظور“ سامراجی قرضہ نامنظور“”تعلیمی بجٹ میں اضافہ کرو“”فوجی اخرجات میں کمی کرو‘”‘ہسپتالوں کی نجکاری نامنظور“ جیسے نعرے درج تھے۔مظاہریں عوام دشمن بجٹ اور پالیسیوں کے خلاف نعرے بازی کرتے رہے۔عوامی مزاحمت نے تحریک انصاف کی طرف سے پیش کردہ آئی ایم ایف کے بجٹ کو مسترد کردیا ہے جس میں دوالیہ معیشت کا تمام تر بوجھ محنت کش عوام،عورتوں اور نوجوانوں پر ڈالا جارہا ہے تاکہ عالمی و گماشتہ سرمایہ داروں کی لوٹ مار کو برقرار رکھا جاسکے۔یہ بجٹ جہاں ایک طرف سرمایہ داروں کو قومی معیشت کے نام پر چھوٹ دیتا ہے تاکہ وہ زیادہ منافع حاصل کرسکیں اور نجی سرمایہ کو یقین دلاتا ہے کہ وہ ان کے سرمایہ اور منافع کا خیال رکھے گا جیسے گردشی قرضہ کو ختم کرنے خوش کن دعوی لیکن یہ نہیں بتاتے کہ یہ گردشی قرضے بجلی کی کمپنیوں کے ساتھ غیر منصفانہ معاہدوں کا نتیجہ ہیں اور نہ ہی تبدیلی کے نعرے کے تحت برسراقتدار آنے والی حکومت کی یہ جرات ہے کہ وہ ان سے اس حوالے مذاکرت کرئے یا ان کو قومی تحویل میں لے یہ اس کی بجائے بجلی مہنگی کرکے اس کا بوجھ محنت کشوں اور لوئر مڈل کلاس پر ڈالنا چاہتے۔اس کے ساتھ روزمرہ استعمال کی اشیاء پر ٹیکسوں کی بھرمار کردی گئی ہے اور یوں چینی سے لے کر گھی اور دیگر کھانے پینے کی اشیاء میں اضافہ کیا جارہا ہے۔ایک طرف اعلیٰ تعلیم کے بجٹ میں کٹوتی کی گئی ہے جبکہ دوسری طرف اسٹاک مارکیٹ میں 20ارب ڈالے گے ہیں یہ سب حکمران طبقہ کی ترجیحات کو ظاہر کررہا ہے۔محنت کشوں کی تنخواہوں میں 10 فیصد اضافہ درحقیقت ان کی تنخواہوں میں کم از کم 40سے 50فیصد کٹوتی ہے۔لیکن وزیراعظم ہاوس کو یونیورسٹی بننے کا دعوی کرنے والوں نے اس کے اخرجات میں 18فیصد اضافہ کردیا ہے۔یہ بجٹ ایک دھوکا ہے اور اس کے بعد لاتعداد مزید منی بجٹ متوقع ہیں جس میں عوام پر مزیدمہنگائی،بیروزگاری،نجکاری اور غربت مسلط کی جائے گی۔سرمایہ داروں سے ابھی مذاکرات ہوں گے اور ان کی خوشنودی کو ”قومی معیشت“کے نام پر برقرار رکھا جانے کی پوری کوشش ہوگی اور یہی آئی ایم ایف اور تحریک انصاف کی حکومت کا مقصد ہے۔اس لیے عوامی مزاحمت لاہور اور پاکستان بھر میں محنت کشوں،کسانوں،عورتوں اور طلباء کی تنظیموں سے اپیل کرتی ہے کہ آئیں مل کر اس عوام دشمن حکومت کا مقابلہ کریں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here